दिल्ही में उर्दू के मुम्ताज जदीद शायर आदिल मन्सूरी के एजाज में नशीश्त_ध इन्किलाबमुम्बइ

 उर्दू की नइ बस्तीयोंमें भी नइ नसल उर्दूसे बेगाना हैः डोकटर शेहपर रसूल

 

उर्दू के माअरूफ शायर और मुसव्वीर  आदिल मन्सूरी के एजाज में जमिआ नगर,नइ दिल्ही के मुजीब बागमें एक नशीश्त का एनएकाद किया गया.

आदिल मन्सूरी एक तवील अर्से से अमरीकामें मुकीम है.गुजिश्ता दिनों गुजरातकी हकुमतने उन्हें वली गुजराती एवॉर्ड से सरफरज किया था.इसी सिसिलेमें वो हिन्दोस्तां के दौरे पर हैं.

उन्होंने दिल्ही में भी एक दिन कयाम किया.इस नशीश्तमें हिन्दुस्तानी शायरी के अमुमी मैलानात  और मोजुदा रुहजान पर गुफ्तगु हुइ.

आदिल मन्सूरी चुं कि उर्दू के अलावा गुजराती जबान के भी शायर है,इस लिये न्होने गुजराती अदब के मौजुदा मन्झरनामे पर भी गुफ्तगु की.और कहा कि गुजराती में जो गझ्लें कही जा रही है उनमें नए मजामीनकी तलाश पर ज्यादा जोर है.गुजराती जबानके मुशायरों में शायरी की वही हैयत मकबूल है, जीसे हम उर्दू वाले गझ्ल कहेते हैं.

जुबेर रजवीने कहा कि आज कल मरुजा सारफी कल्चर एक तरह से जबानो तेहजीब की नफी करने वाला है.

डोकटर शहीर रसुल ने कहा कि इन दिनों उर्दूकी नई बस्तियों का बहुत शोर है,लेकिन हमें ये भी ध्यान रखना चाहिये वहां परवान चढने वाली नई नसल उर्दूसे बेगाना है.

नशिश्त के मेजबान डॉकटर अहमद महफूजने कहा कि ये बात बहर हाल खूश आइन्द है कि हमने इस मोके को गनीमत जान कर न सिर्फ ये कि आदिल मन्सूरीसे उनका कलाम सुना,बल्कि उर्दू के अलावा बाज दीगर जबानों की शायरी पर गुफ्तगु भी हुइ.उन्होने कहा कि गुजिस्ता चार दहाइओंसे आदिल मन्सूरि जदिदयतके निहायत मोअतबर और नुमाइन्दह शायर और फनकार के तौर पर दुनियामें मअरुफ और मकबूल है.

जनाब खालिद बीन सुहैलने कहा कि आदिल मन्सूरी की शायरीकी दुनियामे जो हेसियत है,वो तो मुसल्लम है ही, मगर मे उन्हें एक बहुत अच्छे आर्टीस्ट के तौर पर भी जानताहुं.हेरतकी बात है कि दोनो काम एक साथ निहायत उमदगीसे साथ आदिल साहब केसे अन्जाम देते हैं.

नशीश्तमें दिल्ही के मुमताज अहले अदब और दीगर मोअज्जजीननें भी शिर्कत की.

(रीपोर्टः उमैर मन्जुर   ,दिल्ही)

ऊर्दू अखबार ध इन्किलाबमुम्बइ के सौजनयसे)

  With Courtesy of ‘The Inquilab’ Urdu Mumbai 1st July2008

 

 

 

 

Advertisements

 

एक शिकस्ता खोपड़ी

 

गर्म नीले जीस्ममे से

गोश्त के  उन लोथड़ों को नोच लुं

रच गया है जिनमें मेरे और तेरे अजदादका खुं

नोचलुं और नोचकर

बूढे कब्रस्तान की तूटी हुई कब्रोंसे बाहर

झांकती सब हड्डियों पर थोप दुं,

एक शिकस्ता खोपरीमें

खून भर कर पियुं

घास पर बैठे हुए आकाश के चेहरे पे थुकुं

पांव में मरते हुए पानी को एक ठोकर लगाउं

आगमें रस्ता बनाउं

दो लरजती उंग्लियों के दरमियां

गेहुं के दानो को रख कर

देर तक रोता रहुं

 

_ आदिल मन्सूरी

 

 

Posted by: aektinka | अप्रैल 4, 2008

Hazrat Muhammad SAW. Kay ismey giraami kee calligraphy_Adil

Hazrat Muhammad SAW.Kay ismey giraami kee calligraphy_Adil Mansuri

hzoor6.jpg

hazoor7.jpg

hazoor4.jpg

hazoor1.jpg

hazoor2.jpg

tnhazoor3.jpg

hazoor5.jpg

hazoor8.jpg

hazoor9.jpg

 

Posted by: aektinka | मार्च 26, 2008

आवाज की दीवार_ आदिल मन्सूरी

tootaminar.jpg 

आवाज की दीवार

आवाज की दीवार भी चुप चाप खडी थी
खिड्की से जो देखा तो गली उंघ रही थी

बातों ने तो तेरा लम्स महसूस किया था
लेकीन ये खबर दिलने बडी देरसे दी थी

हाथों में नया चांद पडा हांफ रहा था
रानो पे बरहना_सी नमीं रेंग रही थी

यादों ने उसे तोड दिया मार के पत्थर
आईने की खंदक में जो परछाई पड़ी थी

दुनिया की गुजरते हुए पड़ती थी निगांहे
शीशे कि जगह खीड़की में रुस्वाई जड़ी थी

टूटी हुई महराब से गुम्बद के खंडहर पर
ईक बूढे मुअज्जिन की सदा गुंज रही थी

_ आदिल मन्सूरी

(हश्रकी सुबह दरखशां हो_155)

bam2deewaodar.jpg 

आबाद शहरको छोड कर

आबाद शहरको छोड कर सुनसान रास्ते
जंगल के सिम्त जाने किसे ढुंढने लगे

क्या पूछ्ते हो कैसे रहे दिन बहार के
गर फूल, बेशुमार थे कांटे भी कम न थे

घरसे गलीकी सिम्त मेरे पांव जब बढे
दरवाजे पूछ्ने लगे साहब किधर चले

हद्दे_ नजर तलक मेरे दीवारए बामो दर
हसरत भरी नजरसे मुझे देखते रहे

पानी पिलाने वाला वहां कोइ भी नथा
पनघट के पास जा के भी हम तिशन लब रहे

शोले उगलते गुजरी है सड्कोंसे दो पहर
आदिल तमाम पेडोंके साये वो जल गये

_ आदिल मन्सूरी

(हश्रकी सुबह दरखशां हो_154)

abaadshaher.jpg

 

Posted by: aektinka | मार्च 9, 2008

عادل منصوری _ اب آخری دِرا ہے

عادل منصوری _ اب آخری دِرا ہے

jompra.jpg
aidlgazhal3.jpg
Posted by: aektinka | मार्च 9, 2008

عادل منصوری کی نظمیں : چند پہلو

adil_mansori_ghazlen.jpg
adilabstract1.jpg

فضیل جعفری

عادل منصوری کی نظمیں : چند پہلو

جدیدیت کی طرح جدید اردو ادب کی تاریخ بھی خاصی پرانی ہوچکی ہئے چند مصرعوں میں ہی کس طرح ان عورتوں کا سارا جسمانی اور روحانی کرب سمٹ آیا ہے جو نوعمری میں ہی جسم فروشی پر مجبور کردی جاتی ہیں۔ دیکھتے ہی دیکھتے ان کے جسموں کی تمام تازگی اور شادابی ختم ہوجاتی ہے۔ انھیں ایسی خطرناک بیماریاں لاحق ہوجاتی ہیں جو ان کے جسمانی نظام کو ہی نہیں ذہنی نظام کو بھی بے ترتیب کردیتی ہیں۔ گاہک آتے ہیں اور ان کے جسموں میں اپنے آتشک زدہ خون کا زہر انڈیل چلے جاتے ہیں۔ فاک لینڈ روڈ ایک بدبودار جلتے ہوئے شہر میں تبدیل ہوجاتی ہے۔ موت کی کالی مسکراہٹ سے مراد یہ ہے کہ ان جسم فروش عورتوں کی عمر زیادہ نہیں ہوتی اور ناقابل علاج بیماریاں انھیں دیمک کی طرح چاٹ جاتی ہیں۔ آخر کار وہ اس جگہ پہنچ جاتی ہیں جہاں سے واپسی کا کوئی امکان باقی نہیں رہتا۔

ف”فا ک لینڈ روڈ“ کے بعد ”میرین ڈرایو“ پر نظر ڈالنا ایک قطعاً متضاد صورت حال سے دوچار ہونا ہےے۔ اسے ایک خوشگوار ادبی اتفاق ہی کہا جاسکتا ہے کہ ۱۹۶۰ والی دہائی کے آخر میں اور ترقی پسندی کے دور شباب میں جدیدیت کا جو رجحان ابھر کر سامنے آیا اس کے خد وخال اور سروکار آج بھی اتنے ہی واضح ، موثر اور تروتازہ ہیں جتنے اس وقت تھے۔ جدید لکھنے والے ایک طرف اگر اس کٹر اور تنگ نظر ادبی ماحول کے لئے ایک بڑا چیلنج بن گئے جس کا تعلق مارکسزم سے نہیں اسٹالنزم سے تھا تو دوسری طرف انھوں نے راشد ، منٹو، میرا جی، بیدی اور اخترالایمان وغیرہ کو ازسر نو دریافت اور مستحکم کیا۔یہاں ہم ضمنی طور پر یہ بھی لکھتے چلیں کہ جدید نقادوں، شاعروں اور افسانہ نگاروں نے اپنے بڑے سے بڑے پیش رو کی بھی تقلید نہیں کی۔ انھوں نے اپنے انفرادی موضوعات کو خود شناخت کیا، اپنے لئے نئے اسالیب ایجاد کئے، اور نئی لفظیات کی مدد سے روایتی لسانی سانچوں کو الٹ پلٹ کر رکھ دیا۔ نتیجہ یہ نکلا کہ استالینی ترقی پسندی کی واپسی کا امکان ہمیشہ کے لئے ختم ہوگیا۔ ہمیں اس بات کی بھی خوشی ہے کہ آگے چل کر مخدوم محی الدین، علی سردار جعفری اور جاں نثار اختر جیسے اہم ترقی پسند شاعر بھی اپنے ذہن میں رویوں میں تبدیلی کرنے اور جدیدیت سے ہم آہنگ ہونے پر مجبور ہوگئے۔ کہنے کو تو آج بھی کچھ لوگ اپنے نام کے ساتھ ”ترقی پسند“ کا لیبل چسپاں کرتے ہیں ان کی اصل حیثیت ادبی چٹکلوں اور تابوت برداروں سے زیاہ نہیں ہے۔ تاحال جدیدیت ہی اردو کا غالب محاورہ بنی ہوئی ہے۔
شمس الرحمن فاروقی نے خصوصاً اور دیگر کئی جدید نقادوں نے عموماً غالی ترقی پسندی کے جس طرح پرخچے اڑائے وہ جگ ظاہر ہے۔ عادل منصوری غالباً ایسے واحد جدید شاعر ہیں جنھوں نے اس موضوع پر بڑی عمدہ اور بھرپور نظم لکھی ہے۔
کھوکھلے لفظوں کی دیوار بنانے والو
کب کا وہ ٹوٹ چکا سرخ خطیبانہ طلسم
اور تم صبح کے رستے میں پڑے سوتے ہو
فکر کے بالوں پہ بے عقل سفیدی چھائی
منتشر کر گئیں گمنام ہوائیں تنکے
شیروانی سے ہوئے اور بھی موزوں قامت
پہلے اک چوکھٹا بنوا لو نئے دانتوں کا
تاکہ تم آئینہ دیکھو تو ذرا ہنس تو سکو

عادل کا شمار اس دور کے ان درجنوں بالکل نئے شاعروں میں ہوتا ہے جو ۱۹۶۸ میں ”نئے نام“ (مرتبہ شمس الرحمن فاروقی اور حامد حسین حامد) نامی انتخاب کی اشاعت کے ساتھ سامنے آئے تھے۔ فاروقی نے ان کے مجموعے ”حشر کی صبح درخشاں ہو“ کا تعارف کراتے ہوئے لکھا ہے کہ عادل منصوری ہمارے عہد کے ”سب سے زیادہ تازہ کار اور سب سے زیادہ مہم جو اور باہمت شاعر“ ہیں۔ جو بات فاروقی نے نہیں کہی مگر جو بین السطور کے پردے کے پیچھے سے جھانک رہی ہے وہ یہ ہے کہ کئی دوسرے اہم جدید شاعروں کے یہاں سے مہم جوئی اور تازہ کاری جیسے عناصر رخت سفر باندھ چکے ہیں۔ ابتدا تو سبھی شاعروں نے بڑی ہمت سے کی تھی، پھر آخر یہ لوگ اتنی جلد کیوں تھک گئے؟ سیدھا سا جواب یہ ہے کہ ہمارے بیشتر نمائندہ شاعروں نے حالات سے گھبرا کر اور اعزازو انعام کے چکر میں پڑ کر اپنی شاعری کو سماجی مصروفیتوں میں بدل دیا۔ سستی قسم کی شہرت اور بہت ہی معمولی مادی مفادات ان کی تخلیقی قوت کو موقع ملتے ہی کسی نہ کسی حد تک ہڑپ کر گئے۔ ہم یہاں خوف فساد خلق کی وجہ سے کسی کا نام نہیں لے رہے ہیں۔ آپ خود ان ناموں کو یاد کرلیجئے۔ آپ کو پتہ چلے گا کہ ہمارے اہم شاعروں کے یوں تو اب تک کئی کئی شعری مجموعے شائع ہوچکے ہیں۔ مگر ان کے پہلے مجموعے کو جو شہرت اور مقبولیت حاصل ہوئی تھی وہ دوسرے تیسرے یا چوتھے کے حصے میں نہیں آئی۔

عال منصوری چونکہ ان جھمیلوں میں نہیں پڑے اس لئے وہ تخلیقی تھکن کا شکار ہوجانے کے بجاے برابر اور خاموشی کے ساتھ آگے بڑھتے رہے۔ بالکل یہی بات قاضی سلیم اور شفیق فاطمہ شعریٰ کے بارے میں بھی کہی جاسکتی ہے۔ عمیق حنفی نے زیادہ عمر نہیں پائی لیکن وہ بھی جب تک جئے شاعرانہ بانکپن اور بے نیازی کے ساتھ زندہ رہے۔ حقیقت یہ ہے کہ ادب اور دنیاداری کبھی بھی ہم سفر نہیں ہوسکتے۔ دنیا دار شاعر ہو یا افسانہ نگار وہ بہت جلد اپنے آپ کو دہرانے لگتا ہے۔

عادل کے یہاں شروع سے آخر تک جو تازگی اور ندرت ملتی ہے اس کا بڑا سبب یہ ہے کہ وہ خود اپنے ہی موضوعات کے جنگل میں پھنس کر رہ جانے کے بجائے ان سے آ زادی حاصل کرنے کی سعی پیہم میں مصروف نظر آتے ہی۔ دوسرے لفظوں میں یہ کہ ان کی شعری رینج یعنی ان کے موضوعات کا دامن بہت وسیع ہے۔ عادل کی نظموں کو باقاعدہ خانوں میں تقسیم کرنا ہی ناممکن ہے۔ تنقیدی سہولت کی خاطر زیادہ سے زیادہ یہ کہا جاسکتا ہے کہ ان کی شاعری پر مذہب سیاست، شہر، سماج، ثقافت، تاریخ ، اسطور، خارجی واقعات، شخصی دکھ درد سبھی کی چھاپ نظر آتی ہے۔ اس طرح ان کی شاعری میں بڑی لچک پیدا ہوگئی ہے۔

عادل منصوری کے سلسلے میں ہمیں فاروقی کے اس خیال سے بھی مکمل اتفاق ہے کہ وہ اردو کے واحد سرریلسٹ(Surrealist) شاعر ہیں۔ ہمیں اگر ان کی شاعری میں دادازم (Dadaism)کی بھی جھلکیاں نظر آتی ہیں تو شاید اس کا سبب یہ ہے کہ دونوں کے طریق کار میں بڑی یکسانیت پائی جاتی ہے۔ جدید شاعروں نے سمبلزم اور امیجزم سے جو استفادہ کیا اور جس انداز میں نئے اسالیب کو متعارف کرایا وہ ہر اعتبار سے قابل قدر ہے۔ عال کی مادری زبان گجراتی ہے۔ ان کا شمار گجراتی کے نمائندہ جدید شاعروں میں ہوتا ہے۔ چونکہ گجراتی میں سر ریلسٹ شاعری پہلے سے ہورہی تھی اس لئے عادل کے لئے سر ریلسٹ تکنیک سے فائدہ اٹھانا نسبتاً آسان تھا۔ انھیں آندرے برٹین اور اس کے ساتھیوں تک جانے کی ضرورت نہیں پڑی۔آگے چل کر یہی ان کی انفرادی شناخت بن گئی۔

سر ریلسٹ تکنیک کا ہی نتیجہ ہے کہ وہ مختلف امیجز کو ایک دوسرے میں پیوست کرکے ان کے درمیان ایک ایسا رشتہ پیدا کردیتے ہیں جو بظاہر غیر منطقی نظر آتا ہے۔ انھوں نے اپنی کم و بیش سبھی نظموں میں منطقی تسلسل سے احتراز کیا ہے کیوں کہ منطق بطور اصول خیال اور تخئیل کو محدود کردیتی ہے۔ ان کے یہاں لامحدود انسانی دماغ کے اندر جھانک کر دیکھنے اور روحانی آزادی سے لطف اندوز ہونے کا عمل ملتا ہے۔عادل کی نظموں میں ایک علامت دوسری علامت سے ، ایک امیج دوسرے امیج سے اور ایک استعارہ دوسرے استعارے سے سے غذا حاصل کرتے ہیں۔ انھوں نے غیر شعوری طور پر یہ دکھایا ہے کہ انسانی دماغ اور دنیا بظاہر دو اکائیاں ہونے کے بطاوجود ایک ہی سکے کے دو رخ ہیں۔ حساس اور تخلیقی ذہن انھیں الگ الگ کرکے نہیں دیکھ سکتا۔

یہ خصوصیات عادل کی سبھی نظموں ، حتیٰ کہ ان نظموں میں بھی ملتی ہے جن پر مذہب کی چھاپ ہے۔ یہاں یہ وضاحت ضروری ہے کہ انھوں نے مذہب کے سلسلے میں الیٹ کے نظرئیے کی پیروی نہیں کی۔ ایلیٹ نے عہد حاضر کے تمام مسائل کا حل چرچ میں ڈھونڈا ہے۔ عادل نے ”حشر کی صبح درخشاں ہو مقام محمود“، ”قلم اٹھا لئے گئے“،” الف سیریز “کی نظمیں اور” تبوک آواز دے رہا ہے“ وغیرہ میں تلمیحوں، استعاروں اور علامتوں کی مدد سے اسلامی تاریخ کی اعلیٰ ترین شخصیت کے علاوہ بعض بے حد اہم شخصیتوں اور واقعات کا ذکر کرکے موجودہ معاشرتی ماحول کی تشریح کی ہے۔ اردو میں ایسی نظمیں پہلے نہیں لکھی گئی تھیں۔ ان نظموں میں بلند ترین انسانی اقدار اور اخلاقیات کو اتنے تخلیقی انداز میں پیش کیا گیا ہے کہ تاریخ زندہ اور موجود لمحے کے طور پر پوری روحانی قوت کے ساتھ اجاگر ہوجاتی ہے۔ان کا ایقان ہے کہ ان اقدار سے عدم واقیت آج کے انسان کے حق میں عذاب بن گئی ہے۔ یہ وہ عظیم انسانی اور تاریخی روایات ہیں جن کا سوتا خشک نہیں ہوا ہے۔ البتہ موجودہ دور میں اس سے سیراب ہونے کے حوصلے کا فقدان ضرور ہے۔

”حشر کی صبح درخشاں ہو مقام محمود“ میں عادل نے حضرت محمد ، خلفائے راشدین اور کئی اہم صحابہ ¿ کرام کی جلیل القدر اور مثالی شخصیتوں کے ساتھ ساتھ بہت سے یادگار تاریخی واقعات کو بڑی خوبی اور نفاست سے سمیٹ لیا ہے۔ واقعات کی ترتیب وار اور تفصیلی پیش کش ان کی عادت نہیںہے

فتح مکہ سے مگر لوگ ہدایت پائیں
خون جم جائے جو نعلین میں چلتے چلتے
عرش کی آنکھ سے رحمت کا سمندر ابلے
مسجد نبوی میں انبار غنیمت روشن
لوگ روتے ہوئے نکلے ہیں پریشاں منظر
روشنی پہنچی ابو جہل کی دیواروں تک

علم کے باب علی عمر میں سب سے چھوٹے
چاند کا نام ترے چاک گریبانوں میں

جان دی جاوداں لمحات تلاوت مشغول
خون کے دھبے ہیں قرآن پہ تابندہ نظر

نور مجسم ہوا گنبد خضرا مرکوز
حشر کی صبح درخشاں ہوں مقام محمود
ہاتھ روشن رہے کوثر سے قرابت منظر

اسی طرح جنگ تبوک میں شریک ہونے والے صحابہ سے متعلق نظم کا اختتام بھی ان دعائیہ مصرعوں پر ہوا ہے

مھارے اونٹوں کی گردنوں سے
تمام دنیا میں نور پھیلے
تمھارے گھوڑوں کی ہنہناہٹ
تمھاری منزل کی راہ کھولے

تبوک کو اسلامی تاریخ میں اس لئے بھی اہمیت حاصل ہے کہ یہ وہ آخری غزوہ تھا جس میں حضور اکرم خود شریک ہوئے تھے۔ فتح کے بعد بھی بارہ نقاب پوش منافقین نے آپ پر قاتلانہ حملہ کرنے کا منصوبہ بنایا تھا۔ اگرچہ وہ منافق بعد میں خوف زدہ ہوکر بھاگ کھڑے ہوئے تھے۔ مگر نبی کریم نے انھیں پہچان لیا تھا اور ان سب کے نام حضرت حذیفہ بن یمان ؓ کو بتا دیئے تھے۔ اسی لئے انھیں ’محرم اسرار نبوت‘ بھی کہا جاتا ہے۔

عادل منصوری کی ایسی نظموں میں جو روحانی کیفیت اور مابعد الطبیعیاتی جلا ملتی ہے وہ ان کا ذاتی سرمایہ ہے۔ ایسی نظموں میں عادل نے کہیں بھی خود کو مذہبی جذباتیت کا شکار نہیں ہونے دیا۔ اس سلسلے کو ختم کرنے سے پہلے یہ بتانا ضروری ہے کہ عادل نے متذکرہ بالانظموں کے علاوہ’ ’پرش“،”سوریہ کا رتھ“، ”استی“ اور ”شراپ“ جیسی نظمیں بھی لکھی ہیں جن کا تعلق اسلامی تایخ اور اخلاقیات سے نہ ہوکر ہندو دھرم اور بدھ دھرم سے ہے۔

جذباتیت کی پرچھائیں ان کی اس نظم پر بھی نہیں پڑتی جو انھوں نے والد کی موت پر لکھی ہے۔ یہ نظم ان کی زخمی روح کی نمائندگی تو کرتی ہے مگر اس میں ذاتی اور جذباتی نقصان سے زیادہ اس کرب کو اجاگر کیا گیا ہے جو کسی شخص کو اپنی آنکھوں کے سامنے قسط وار مرتے دیکھ کر حساس انسان کے دل میں پیدا ہوتا ہے۔ دراصل انھوں نے خود پر شخصی غم کو حاوی کرنے کے بجاے انسانی وجود کی اس معنویت کو ابھارا جو بالآخر معنویت میں بدل جاتی ہے۔

وہ چالیس راتوں سے سویا نہ تھا
وہ خوابوں کو اونٹوں میں لادے ہوئے
رات کے ریگزاروں پہ چلتا رہا
چاندنی کی چتاوں میں جلتا رہا
میز پر
کانچ کے ایک پیالے میں رکھے ہوئے
روح کا ہاتھ چھلنی ہوا
سوئی کی نوک سے
خواہشوں کے دیے
جسم میں بجھ گئے

پوری نظم میں شاعر کے مطالعے کی صحت (Accuracy)قابل داد ہے۔ بستر مرگ پر پڑے ہوئے باپ کی ہر جسمانی اور ذہنی اذیت شاعر کے لئے ناقابل فراموش روحانی تجربے میں بدل گئی ہے۔ رات کے رہگذاروں پہ چلنے اور چاندنی کی چتاو ¿ں میں جلنے کا صاف مطلب ہے کہ بیمار کے لئے ایک ایک پل کاٹنا مشکل ہے۔ کانچ کے پیالے میں رکھے ہوئے دانتوں کے ہنسنے سے مراد ضعیف العمری کا خندہ زن ہونا ہے۔ مسلسل لگنے والے انجکشنوں نے بیمار کے نحیف ہاتھوں کو ہی نہیں اس کی روح کو بھی چلنی کردیا ہے۔ آخر نتیجہ جسم میں خواہشوں کے چراغوں کے بجھ جانے یعنی موت واقع ہونے کی شکل میں ظاہر ہوتا ہے۔

عادل منصوری کی نظموں کے دیگر موضوعات میں شہر اور شہری زندگی کا موضوع خصوصی اہمیت کا حامل ہے۔ سب جانتے ہیں کہ شہر اور شہری زندگی کا عذاب جدید شاعروں کا مشترکہ اور پسندیدہ موضوع ہے۔ اس رجحان کا تعلق کسی فیشن سے نہیں بلکہ اس حقیقت سے ہے کہ جدید دنیا بنیادی طور پر شہروں سے ہی تعلق رکھتی ہے۔ جدید شاعروں نے بامعنی ماضی سے اپنا رشتہ برقرار رکھتے ہوئے شہری زندگی کے عذابوں، پیچیدگیوں، اعصابی تناو ¿، زندہ رہنے کے لئے کی جانے والی مسلسل بھاگ دوڑ، نیز صنعتی ترقی کے سیلاب میں تنکوں کی طرح بہہ جانے والی مہذب اور نفیس اقدار کا نہ صرف موثر اور حقیقت پسندانہ اظہار کیا ہے بلکہ ہر شاعر نے شہر کو اپنے انفرادی زاویئے سے دیکھا ہے۔
عادل منصوری اردو کے اکیلے شاعر ہیں جنھیں بین الاقوامی حسیت کا شاعر کہا جاسکتا ہے۔ ”ایک منظر“،” تنہائی“،” لہو جس کا معصوم ہے اس کو روکو“، ”دشت ابہام“، ”نقرئی رات“، ”شعور نیلی رطوبتوں سے الجھ گیا ہے“،” وقت کی ریت پر“ وغیرہ ایسی نظمیں ہیں جن کا اطلاق جتنا ممبئی، دلی اور کلکتہ پر ہوتا ہے اتنا ہی لندن، ٹوکیو، شنگھائی اور نیویارک جیسے شہروں پر بھی ہوتا ہے۔ ایک مثال پیش خدمت ہے

وہ آنکھوں پر پٹی باندھے پھرتی ہے
دیواروں کا چونا چاٹتی رہتی ہے
خاموشی کے صحراو ¿ں میں اس کے گھر
مرے ہوئے سورج ہیں اس کی چھاتی پر
اس کے بدن کو چھو کر لمحے سال بنے
سال کئی صدیوں میں پورے ہوتے ہیں

(تنہائی)

اس قبیل کی سبھی نظموں کو پڑھتے ہوئے احساس ہوتا ہے کہ موجودہ عہد میں انسان کا وجود بے معنی سا ہوکر رہ گیا ہے۔ خود اس کا داخل اس کے خلاف سازش کرتا ہوا معلوم ہوتا ہے۔ کبھی کبھی انسانی سائکی پر مکمل بے حسی طاری ہوجاتی ہے۔ یقین اور خود اعتمادی پر کوئی انجانا خوف غالب آجاتا ہے۔ ہر گذرتا ہوا لمحہ حساس انسانوں کی رگوں سے خون نچوڑنے کا کام کرتا ہے۔ عام شہریوں کی حیثیت خستہ حال فرنیچر سے زیادہ نہیں رہ گئی۔ ایک اور مثال

زوال سبزوں پہ رینگتا ہو تو
لوگ سایوں کی سیڑھیوں پر
سفید بیلوں کے سینگ میں خواب دیکھتے ہیں
لہو میں موسم کا زہر تحلیل
کس خرابے میں ڈال آئیں

(زمین سر سے بندھی ہوئی ہے)

جہاں تک ممبئی کا تعلق ہے یہ شہر بیسویں صدی کی ابتدا سے ہی شاعروں کا محبوب موضوع رہا ہے۔ بنگلہ شاعروں نے جو غیر معمولی توجہ کلکتہ پر کی ہے وہی توجہ اردو ، مراٹھی اور گجراتی شاعروں نے ممبئی پر مبذول کی ہے۔ بحیثیت مجموعی مراٹھی شاعر نرائن سردے کی طویل نظم ”ماجھی ودیا پیٹھ“ (میری یونیورسٹی) کو اس موضوع پر بہترین اور کامیاب ترین نظم کہا جاسکتا ہے۔ بیحد غریب طبقے سے تعلق رکھنے والے ساہتیہ انعام یافتہ شاعر سردے نے ماجھی ودیا پیٹھ، میں ممبئی کی زندگی کے تمام پہلوو ¿ں اور سارے دکھ درد کو جس خوبی اور فنکارانہ چابک دستی سے سمیٹ لیا ہے اس کی کوئی اور مثال کسی اور ہندوستانی زبان میں نہیں ملتی۔ کم و بیش سبھی زبانوں میں اس نظم کا ترجمہ ہوچکا ہے۔ اردو ترجمہ رفیعہ شبنم عابدی نے کیا ہے۔

جن جدید شاعروں نے ممبئی پر نظمیں لکھی ہیں ان میں ندا فاضلی کی نظم ”مہا نگر“ اہم بھی ہے اور اسے کافی شہرت بھی ملی ہے۔ عادل نے ممبئی پر عمومی انداز میں لکھنے کے بجائے یہاں کے چند ایسے علاقوں اور مقامات کو موضوع سخن بنایا ہے جنھیں کئی اعتبار سے سنگ میل کا مرتبہ حاصل ہے۔ ایسی نظموں میں ”فاک لینڈ روڈ“،” میرین ڈرائیو“، ”کوالٹی کی نیم عریاں شام“، چوپاٹی سے متعلق ایک مختصر سی نظم” رات چھ بجے نیروز میں “وغیرہ خصوصی طور پر قابل ذکر ہیں۔ ان نظموں کو اگر ان کی کچھ دوسری تخلیقات مثلاً” کم سپٹمبر کی دھن پر“، ”ایلن گنس برگ“ اور ”جیسلمیر کے کھنڈر دیکھ کر“ وغیرہ کے ساتھ پڑھیں تو وہی لطف ملتا ہے جو عالمی جدید شاعروں پیٹر ریڈ گرو(Peter Redgrove)، نارمن میک کیگ(Norman MacCaig)، چارلس ٹاملنسن(Charles Tomlinson)، اسٹیون کلارک (Steven Clarke)اور ہنری ریگو(Henry Rego) جیسے شاعروں کی شاعری میں ملتا ہے۔
گرانٹ روڈ اسٹیشن سے قریب واقع فاک لینڈ روڈ نامی علاقہ سستی قسم کی عورتوں کا بہت بڑا بازار ہے۔ منٹو کے” ممو بھائی“ اور’ ’شاردا“ جیسے مشہور افسانے اسی علاقے کی دین ہیں۔ اردو میں عادل کے علاوہ کسی شاعر نے فاک لینڈ روڈ کو موضوع نہیں بنایاحالانکہ ماضی ¿ قریب کے کئی جانے پہچانے ادیب و شاعر اس بازار میں گھومتے پھرتے دیکھے جاتے رہے ہیں

زنگ آلودہ لہو کی نہر
گوشت کا جلتا ہوا اک شہر
نیلے جسموں سے ابلتا خواہشوں کا زہر
بستروں پر ٹوٹتی لذت کی آہٹ
موت کے ہونٹوں پہ کالی مسکراہٹ

دیکھ

شہریوں سے تنگ آکر
شور سے دامن چھڑا کر
اونچی اونچی بلڈنگیں
خود کشی کرنے کی خاطر
صف بہ صف دریا کنارے
دیر سے آکر کھڑی ہیں

ف”فا ک لینڈ روڈ“ پر اگر وہ بدقسمت عورتیں رہتی ہیں جنھیں سماج نے پستی اور ذلت کی عمیق ترین کھاڑیوں میں ڈھکیل دیا ہے تو میرین ڈرائیو پلید حد تک امیر (Filthy rich)خاندانوں کا مسکن ہے۔ بحیرہ ¿ عرب کے مقابل ایک ہی قطار میں بنی ہوئی اور یکساں اونچائی والی بلڈنگوں میں رہنے والے بڑے بڑے سرمایہ کاروں، صنعت کاروں اور شیئر مارکیٹ (سٹہ بازار) کے دلالوں کے دن اگر آس پاس کے علاقوں میں واقع عالی شان ، ایر کنڈیشنڈ دفتروں میں گذرتے ہیں تو راتیں پانچ ستارہ ہوٹلوں ، کلبوں اور ڈسکوز کی رونق بڑھاتی ہیں۔

ممبئی میں جنوبی ممبئی کے نام سے مشہور یہ علاقہ بجاے خود ایک جزیرہ ہے۔ یہاں کے رہنے والوں کو شہر اور شہریوں کے مسائل سے قطعاً کوئی دلچسپی نہیں۔ ہمارے نزدیک یہ لوگ تہذیبی اور ثقافتی یعنی بنیادی انسانی اقدار کے زوال کی چلتی پھرتی ، کھاتی پیتی اور جیتی جاگتی تصویریں ہیں۔ ہمارے اس مفروضے کا تازہ ثبوت ۲۶ جولائی ۲۰۰۵ کو اس وقت سامنے آیا جب اچانک بارش کے سبب پوری شمالی ممبئی میں سیلاب آگیا تھا۔ بلا مبالغہ کئی سو افراد سیلاب میں بہ گئے۔ ہزاروں لوگ بے گھر ہوگئے، مگر جنوبی ممبئی کی صحت پر کوئی اثر نہیں پڑا۔ شراب خانوں ہوٹلوں کے عالوہ سٹہ بازار بھی کھلا رہا۔ جنوبی ممبئی میں رہنے والوں کی یہ ذہنیت کوئی نئی بات نہیں ہے۔ اب اس پس منظر میں عادل منصوری کی یہ مختصر سی طنزیہ نظم دیکھئے

شہریوں سے تنگ آکر
شور سے دامن چھڑا کر
خود کشی کرنے کی خاطر
صف بہ صف دریا کنارے
دیر سے آکر کھڑی ہیں

پہلے دو مصرعے واضح ہیں اور اسی ذہنیت کے غماز ہیں جس کی طرف ہم اوپر اشارہ کرچکے ہیں۔ اونچی اونچی بلڈنگیں اپنے مکینوں کا استعارہ ہیں۔آ خری تین مصرعوں کا مقصد یہ دکھانا ہے کہ شہر کے مرکزی دھارے اور عام شہریوں سے الگ تھلگ تعیش کی زندگی گذانے والے ، میرین ڈرائیو کے باشندے ایک طرف اگر ثقافتی اور تہذیبی اعتبار سے خود کشی پر مائل ہیںتو دوسری طرف بحری تموج کا معمولی سا جھٹکا بھی ان بلڈنگوں کو زمیں دوز کرنے کے لئے کافی ہوگا۔ سمندر کو ’دریا‘ غالباً گجراتی کا اثر ہے کیوں کہ گجراتی میں سمندر کو دریا ہی کہتے ہیں۔

میرین ڈرائیو کی طرح اور اس سے قریب چوپاٹی بھی ممبئی کا ایک مشہور ساحلی علاقہ ہے۔ فرق صرف یہ ہے کہ چوپاٹی نامی ساحل کافی چوڑا ہے اور بلڈنگیں سمندر سے خاصے فاصلے پر تعمیر کی گئی ہیں۔ کسی زمانے میں یہاں فلموں کی شوٹنگ ہوتی تھی اور شرفا، سر شام، بال بچوں سمیت تفریحاً آتے تھے۔ اب اس پورے ساحل پر آئس کریم فروشوں، بریانی پوری کے اسٹالوں اور طوائفوں کا راج ہے۔ سورج ڈھلتے ہی سارا کاروبا ر دھڑلے سے شروع ہوجاتا ہے۔ عادل نے محض تین مصرعوں پر مشتمل اپنی نظم ”رات‘ ‘میں اس تلخ حقیقت کو یوں بیان کیا ہے

رات چوپاٹی کی ٹھنڈی ریت میں
خواہشوں کے گرم سائے سوگئے
لذتوں کے جنگلوں میں کھو گئے

عادل نے یوں تو متعدد ہوٹلوں اور ریستورانوں پر نظمیں لکھی ہیںمگر ہم یہاں صرف دو ایک مثالوں پر اکتفا کریں گے۔ چرچ گیٹ اسٹیشن سے قریب واقع ہوٹل نٹ راج اب سے ۲۰۔۲۵ سال پہلے تک آج کی طرح مہنگا نہیں تھا۔ اس کے پر فضا اور خوبصورت ریستوراں میں اوسط آمدنی والے شوقین لوگ بھی اپنی شامیں گذار سکتے تھے۔ عادل کی یہ نظم غالباً اسی زمانے کی یادگار ہے

موم کی دو انگلیاں
کالی کافی کے کپوں میں گھل گئیں
کوکا کولا میں
اکیلی شام کے سورج کی کرنیں بجھ گئیں
پانی کے جگ میں سمندر چیخ اٹھا
سینڈوچ کے دل میں کانٹے گھپ گئے
پلیٹ میں بیٹھے ٹماٹر ہنس پڑے
کیتلی سے شام کی کالی اداسی بھاپ بن کر اڑ گئی
آنکھ مٹکاتی ہوئی وہ دوسرے ٹیبل کی جانب مڑ گئی

اگر ہم نظم کے موضوع کی حدبندی کرنا ہی چاہیں تو یہ کہہ سکتے ہیں کہ اس میں ایک ایسے نوجوان کو پیش کیا گیا ہے جو تنہا بھی ہے، پریشان بھی ہے۔ اسے کسی کا انتظار بھی نہیں ہے اور اس کے دل میں یہ موہوم سی امید بھی ہے کہ شاید کوئی بھولی بھٹکی لڑکی اس کی طرف آنکلے اور کالی، تنہا شام، تھوڑی دیر کے لئے ہی خوشگوار بن جائے۔ اس نظم کی تکنیکی اور فنی خصوصیت یہ ہے کہ تقریباً ہر منظر اور ہر احساس کو ٹھوس بصری پیکروں (Visuals) کے ذریعے قاری تک منتقل کیا گیا ۔ کافی کے پیالوں میں گھل جانے والی موم کی انگلیاں دراصل شکر کی ٹکیاں (Cubes)ہیں ۔ کوکا کولا کی گہری سیاہی مائل رنگت اس اندھیرے کی طرف اشارہ کرتی ہے جو سورج ڈھلتے ہی چھا جاتا ہے۔ جگ میں سمندر کا چیخ اٹھنا اور پلیٹ میں رکھے ہوئے ٹماٹر کے قتلوں کا ہنس پڑنا، علامتوں اور استعاروں پر شاعر کی آنکھ اور اس کے کان کی فتح کے مصداق ہے۔

لڑکی کو ہوٹل میں داخل ہوتے ہوئے اگر شام کی کالی اداسی کیتلی سے بھاپ کی طرح اڑجاتی ہے تو اس کا مطلب شاعر کا وہ موہوم سا یقین ہے کہ لڑکی اس کی میز کی طرف آرہی ہے۔ نظم کلائمکس تک پہنچتے پہنچتے اس وقت اینٹی کلائمکس بن جاتی ہے۔ جب لڑکی ہیرو صاحب کو گھاس ڈالنے کے بجائے کسی اور میز کی طرف بڑھ جاتی ہے۔ ’آنکھوں کا مٹکانا‘ علامتی طور سے یہ اشارہ کرتا ہے کہ موصوفہ ممبئی کی زبان میں خاص ’چالو‘ قسم کی چیز ہیں۔ اب عادل کی ایک اور نظم”کم سپٹمبر“ سے یہ چند مصرعے دیکھئے

کم سپٹمبر کی دھن پر تال دیتی انگلیاں
واز کے پھولوں پہ اڑتی تتلیاں
ٹیبلوں پر کالے سایوں کی جواں سرگوشیاں
سگرٹوں سے جھوم کر اڑتا دھواں

ان مصرعوں میں بھی کان اور آنکھ ایک دوسرے سے ہم آہنگ ہوگئے ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ ساز سے نکلنے والی دھنیں گلدان میں رکھے ہوئے پھولوں پر رقص کر رہی ہیں۔ نیم روشن ریستوران میں بیٹھے ہوئے نوجوان جوڑوں کو پوری طرح دیکھنا تو مشکل ہے مگر ان کی محبت بھری سرگوشیوں کو ضرور محسوس کیا جاسکتا ہے۔

عادل کی دوسری اہم نظموں میں” کون ہے؟“،” میں تمھارا منتظر ہوں“، ”پیتل کا سورج چمکاو ¿“،” دو گھڑی کے درمیان“، ”دھواں“ وغیرہ ان کے سر ریلسٹ اسلوب اور اچھوتے موضوعات سے ان کی فطری رغبت کی نشان دہی کرتی ہیں۔ ہم پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ عادل کی نظموں کو Categoriseنہیں کیا جاسکتا۔ ہاں اتنا ضرور کہا جاسکتا ہے کہ ان نظموں میں فلسفیانہ اور مابعدالطبیعیاتی ادراک کی بھی فراوانی ملتی ہے، ان سے صحت مند جنس کی خوشبو آتی ہے، ان میں بڑی حد تک ناقابل فہم پراسراریت کی جھلکیاں بھی ملتی ہیں اور کہیں کہیں خالص عشق کا بانکپن بھی دکھائی دیتا ہے۔
جہاں تک سماج کا سوال ہے اسے ہر عہدکے ادب میں ’بادہ و ساغر‘ والی اہمیت حاصل رہتی ہے۔ عادل منصوری بھی سماج سے الگ تھلگ نہیں ہیں۔ ان کے ہاں موجودہ سماج کے تعلق سے ناراضگی اور برہمی کا جذبہ ملتا ہے۔ وہ سماج کے آسمان پر چھائے ہوئے کالے بادلوں کو دیکھ کر اعصابی تناو ¿ میں مبتلا ہوجاتے ہیں۔ ان کی نظم ’اجداد‘ کا لب لباب یہ ہے کہ موجودہ عہد کے انسان نے مادی، سائنسی اور ٹکنولوجیکل سطح پر تو بہت ترقی کرلی ہے مگر عملی سطح پر وہ دور وحشت میں سانس لے رہا ہے۔ بڑی مچھلیاں چھوٹی مچھلیوں کو بالکل بری طرح ختم کر رہی ہیں جس طرح ماقبل تاریخ والے دور کے لوگ دوسروں کے ”سرخ کچے گوشت“ کو صفاچٹ کرجاتے تھے۔ وہ دن دور نہیں جب استعاراتی طور پر لوگ چاہنے لگیں گے کہ شام ہوتے ہی

سب اچھلتے کودتے واپس چلیں
دوسری ٹھوکر کے خوابوں کو جگا کر
غار کے دروازے میں جاکر سو رہیں

یوں تو عہد جدید کے اس غار کے کئی دروازے ہیں مگر وہائٹ ہاو ¿س اور ۱۰ ڈاو ¿ننگ اسٹریٹ نامی دروازے سب سے زیادہ نمایاں ہیں۔ ”بوسنیا“ سیریز والی نظموں کے ٹھیٹ سرریلسٹ دبیز پردوں کے پیچھے سے ہی روشن حقیقت جھانکتی ہوئی نظر آتی ہے۔ ”کون ہے“ اور’ ’وہ مر گئی تھی“ جیسی نظموں میں انھوں نے ہم عصر زندگی کو اپنے مخصوص اسلوب میں پیش کیا ہے۔ ”کون ہے“ میں انھوں نے زندگی، یا یوں کہئے کہ انسانی وجود کو ایک پراسرار اور خوف ناک چاردیواری سے تعبیر کیا ہے جس کے اندر کا ماحول حساس انسانوں کے لئے ناقابل برداشت ہے

کون ہے
اس چاردیواری کے اندر کون ہے؟
کس کے پیلے دانت
چھت پر چل رہے ہیں
کس کا خالی سر ہوا میں تیرتا ہے
کس کا نیلا خون بستر میں پڑا چلا رہا ہے
کس کے وحشی قہقہوں سے
بند کمرہ گونجتا ہے

ک”کون ہے“ کے عنوان سے عادل نے ایک اور نظم بھی لکھی لیکن اس کا مضمون بالکل مختلف ہے۔’ ’دل کا چور“ ،” دور افق پر“ اور” میں تمھارا منتظر ہوں “
جیسی نظموں میں جنس سے جو کام لیا گیا ہے مگر جنس زدگی نہیں ملتی۔ انھیں پڑھتے ہوئے جسمانی لذت کا نہیں بلکہ یہ احساس ہوتا ہے گویا شاعر اپنی کھال کے باہر اپنے جسم کو تلاش کر رہا ہو۔ یہ نظمیں درحقیقت، جنسی خواہشات اور دوسرے بہت سے انسانی تقاضوں کی آپسی کشمکش کا نتیجہ ہیں

کس کے جلتے لمس سے
پگھلا ہے یخ بستہ لہو
کروٹیں لیتی ہے دل میں
کس کے تن کی آرزو
کس نے میرے ہونٹ پر
کون ہے جو لذتوں کے
آئینوں کو توڑ دے
کون ہے؟
کون ہے؟
شہوت کو شیشے میں
پیتل کے جسموں کے اندر
تنہائی کا جال بنو
ٹیلیفون پہ حال سنو
لفظوں کے گورکھ

مختصر یہ کہ عادل منصوری مذہب سے لے کر سیاست تک جس موضوع پر بھی لکھیں ان کا انداز نرالا اور انوکھا ہوتا ہے۔ اگر وہ ہمارے سب سے زیادہ منفرد جدید شاعر ہیں تو اس کی وجہ ان کا وسیع شعری کینوس ہی نہیں بلکہ یہ بھی ہے کہ انھوں نے اپنے لئے ایک بالکل نئی زبان خلق کی ہے۔ انھوں نے جو تراکیب علامتیں، استعارے اور امیجز تراشے ہیں وہ کسی اور شاعر کے یہاں نہیں ملتے۔ ان ہی چیزوں نے عادل کی شاعری کو پیچیدہ اور بسا اوقا ت مبہم بنا دیا ہے۔ غالباً اسی لئے وہ اہم نقاد جو معمولی شاعری اور اس سے زیادہ معمولی افسانوں سے متعلق بلا تکلف صفحات کے صفحات سیاہ کرنے کے فن میں درجہ کمال تک پہنچ چکے ہیں، عادل منصوری کی شاعری کو ہاتھ لگاتے ہوئے ڈرتے ہیں۔

آخر میں یہ معذرت آمیز اعتراف ضروری ہے کہ ہم اس مختصر سے مضمون میں عادل منصوری کی شاعری کے ساتھ انصاف نہیں کرسکے۔ ان کی نظموں کے کئی دوسرے پہلو تشنہ تشریح رہ گئے۔ عادل جدید غزل کے بھی صاحب طرز شاعر ہیں۔ ان کی غزلیہ شاعری ایک علیٰحدہ اور تفصیلی مطالعے کی متقاضی ہے۔ یہ کام انشاءاللہ کسی اور موقع پر کیا جائے گا۔

Posted by: aektinka | मार्च 9, 2008

َظفَر اِقبَال_ فصل اُگانے سے کیا

 

فصل اُگانے سے کیا
 

fasal.jpg

 دور رہ کر نہ اسے پاس بلانے سے کیا
میں نے اندازہ محبت کا بہانے سے کیا

اس کے اپنے ہی خیالات پریشاں تھے بہت
جس نے آغاز مجھے خواب دکھانے سے کیا

  کچھ تسلی مجھے اندازِ تغافل سے ہوئی
کچھ یقین میں نے مزید اس کے نہ آنے سے کیا

شرکت کار کا اک فیصلہ ہم دونوں نے
درمیاں میں کوئی دیوار اٹھانے سے کیا

 کام کرنا تھا جو ہم نے کبھی خاموشی سے
اس قدر وہ بھی یہاں شور مچانے سے کیا  

عکس اس شوخ کے باہر تک اسے چھوڑنے آئے
گزر اس نے جو کبھی آئینہ خانے سے کیا

کارِ دنیا میں بھلا بھی نہ سکے ہم تجھ کو
آخر اتنا بھی ترے یاد دلانے پہ کیا

عری تھی یہ کسی اور زمانے کے لیے
میں نے مربوط اسے اپنے زمانے سے کیا

ساز گار آب و ہوا ہی نہ ہوئی جس کو، ظفر
تجربہ ہم نے وہی فصل اُگانے سے کیا

 َظفَر اِقبَال

 

 

 
 
 

 

Posted by: aektinka | मार्च 9, 2008

برابر ہے_ظفَر اِقبَال

makana.jpg

برابر ہے

 امیدِ عاقبتِ کار کے برابر ہے
یہ اک درخت کہ دیوار کے برابر ہے

زیادہ دور نہیں امن و جنگ آپس میں
یہ فاصلہ تری تلوار کے برابر ہے

تجھے خبر نہیں یہ ایک بار کا انکار
  ہزار
بار کے اقرار کے برابر ہے

کھلی ہے اور کوئی گاہک ادھر نہیں آتا
دکانِ خواب کہ بازار کے برابر ہے

ہو اس کے بعد زمانوں کا کیا حساب کتاب
جب 
ایک لمحہ لگاتار کے برابر ہے

میں اس لیے بھی زباں کھولتا نہیں کہ ابھی
سکوت ہی یہاں اظہار کے برابر ہے

ہوں اتنا بے سروساماں کہ اس دفعہ مجھ کو
یہ برگِ سبز بھی اشجار کے برابر ہے

مجھے پسند ہے جی جان سے یہ عیبِ سخن
جہاں جہاں میرے معیار کے برابر ہے

وہی پسینہ پسینہ ہوں رات دن، کہ ظفر
ہوا یہاں میری رفتار کے برابر ہے

                                                            

                         _ ظفَر اِقبَال                 

Older Posts »

श्रेणी